پنجاب یونیورسٹی پروفیسر کی جعلسازی، چوری شدہ مقالہ 2 جرنلز میں شائع

  • August 5, 2018 12:22 pm PST
taleemizavia single page

لاہور: پنجاب یونیورسٹی کے ایسوسی ایٹ پروفیسر کا مقالہ چوری کرنے کا انکشاف ہوا ہے۔ سنٹر فار انٹیگریٹیڈ ماؤنٹین ریسرچ کے سربراہ ڈاکٹر صفدر علی شیرازی کے مقالے میں 40 فیصد چربہ سازی کرنے کا انکشاف ہوا ہے۔

پنجاب یونیورسٹی کے سی آئی ایم آر کے ڈائریکٹر ڈاکٹر صفدر شیرازی پر الزام عائد کیا گیا ہے کہ انھوں نےایک ہی مقالہ دو مختلف ریسرچ جرنلز میں مبینہ طور پر شائع کرایا ہے جبکہ اس تحقیقی مقالے میں 40 فیصد چربہ سازی کی گئی ہے۔

تعلیمی زاویہ کو دستیاب دستاويزات کے مطابق ڈاکٹر صفدر علی شیرازی نے انڈین پنجاب کی موسمیاتی تبدیلی پر لکھے گئے ریسرچ پیپر کو من و عن پاکستانی پنجاب کی موسمیاتی تبدیلی سے منسوب کیاجس میں صرف شہروں کے نام تبدیل کیے گئے اور باقی ماندہ تحقیق انڈین پنجاب سے متعلق بھارتی پروفیسر کی تحقیق ہے۔

تفصیلات کے مطابق ایک ہی مقالہ ریسرچ جرنل جغرافیکل پیپرز میں 2003ء میں اور ساؤتھ ایشین اسٹڈیز جرنل میں 2006ء میں شائع کرایا گیا۔ جس وقت مذکورہ ریسرچ پیپر شائع ہوا ڈاکٹر صفدر شیرازی شعبہ جغرافیہ میں اسسٹنٹ پروفیسر کے عہدے پر تعینات تھے۔

سابق وائس چانسلر ڈاکٹر ظفر معین ناصر نے پروفیسر صفدر شیرازی کو سی آئی ایم آر کا ڈائیریکٹر تعینات کیا تھا۔

ڈاکٹر صفدر شیرازی نے میڈیا کو موقف دیا ہے کہ یہ منفی اور جھوٹا پروپیگنڈا ہے، انھوں نے کسی بھی ریسرچ پیپرکو ضوابط اور قوانین کے برعکس شائع نہیں کرایا۔ شعبہ جغرافیہ میں سینئر ترین استاد ہونے کی بناء پر مجھے متنازعہ کرنے کی کوشش کی جارہی ہے۔ دس اگست کو شعبہ جغرافیہ کے سربراہ ڈاکٹر عبد الغفار ریٹائرڈ ہوجائیں گے جبکہ توقع کی جارہی ہے کہ مجھے ادارے کا سربراہ تعینات کیا جائے گا۔

ڈاکٹر صفدر شیرازی کی مبینہ جعلساری کے خلاف وائس چانسلر ڈاکٹر نیاز احمد اختر کو باقاعدہ درخواست بھی جمع کرا دی گئی ہے۔ اس درخواست پر رجسٹرار پنجاب یونیورسٹی ڈاکٹر خالد خان نے اپنے موقف میں کہا ہے کہ پلیجرازم کیس اور ایک ہی مقالہ دو جرنلز میں شائع کرانے کی انکوائری کمیٹی سے کرائی جائے گی اور اس کی رپورٹ آنے کے بعد کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔


Sent from my Samsung Galaxy smartphone.

  1. ڈاکٹر صفدر شیرازی نے سوال گندم کا جواب چنا دیا ہے. اگر انہوں نے ایسا کوئی اقدام نہیں کیا تھا جو واقعی لائق شرم ہے تو پھر میڈیا کو قانون سکھانے کی بجائے مدلل جواب دیتے.خیر یہ ایک برا فعل ہے. اس سے پاکستان کی تعلیمی کمیونٹی کا برا تاثر گیا ہے

  2. Plagiarism aik intihai shramnak bat ha.fraud aur zyadti ha na sirf us insan k sath jis ka research chori ki gai bulke idare aur dusre qabil asatza k sath b zyadti ha. Dr safdar ko justify krna chaye ilzamat ka jawab dena chaye solid arguments n proofs k sath agr wo culprit ni hen to.
    Aur heads aur comittees ko is sub matter ko transparently invrestigate krna chaye ta k kisi k sath zyadti na ho aur gum na ho ase case filon me. Us tak dr safdar ko moatal kia janaa chaye aur na ase controversial person ko idare ka head bnaya jai til the final outcomes of ds investigation.

  3. not fair play.we are not expecting professor community to copy research material of an other scholar. true effoert should be put amass a wast material than complite that so for good way to serve community

  4. Don’t know the details related to this. But Incompetency is the worst problem we are facing in Pakistan. Incompetency not only related to professionalism but it can be moral also. So we should work on it we should spread education, the real education to eliminate this problem

  5. It is a fake censuring about professor safdar sherazii.He is a sincere teacher of our department .It is just a trap.

  6. Khuda ki paker boat sakhat hy Dr. Sahib!, insan ko ager bra rank /ouhida mil jay to usay wakat ka yazeed ni ban jana chiay…ya duniya makafatay umal hy, but ap ya bhual gay thay…Shame on your that act…shame on you as being a teacher in a prestigious educational institute: dept geography, Dr sabib! ab to ap apni hakikat jan hi gay hu gay ka, product fazual ni hu skti ager us product ka producer fazual na hu, jb product ko bnanay vala procucer hi fazual hu ga, to pher product bi vasi hi hu gi na….

  7. Sochne ki bat hai ap sb b sochen k ye issue is time keo utha jab head ship ka muamla ane wala hai 15 sal purani bat ab open kerne ki kia tuk hai sherazi sb ne thek kaha hai k un k khilaf shazish hai ye Doc sb boht competent bande hain ye waqae unke khilaf sazish ho rahi hai

  8. I know its just politics… in geography department some teacher want to slaughter them …. but InshAllah jald haqaq samny ain gy or sir sherzi surkhuru hongy😇

  9. My request to respected Professors writing these columns is, either to write in Urdu or in proper English. We need to avoid this writing Urdu in English alphabets.
    Dr.N.M.Butt
    Scientist Emeritus PAEC

Leave a Reply to Tahleel Rehman Cancel reply

Your email address will not be published.