بھارت کا 10 ہزار غیر ملکی طلباء کو داخلہ دینے کا فیصلہ

  • 310 Views
  • اکتوبر 30, 2016 10:32 صبح PST

pag1-image

رپورٹ: رملہ ثاقب

بھارت میں ﺁﺋﯽ ﺁﺋﯽ ﭨﯽ کے ﻃلبا ﮐﯽ ﮐﻞ تعداد 72000 ہے اور2020 تک ﺳﮯ ﺗﻌﺪﺍﺩ ﻣﯿﮟ ﺍﺿﺎﻓﮧ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﻣﻨﺼﻮﺑﮧ ﺑﻨﺪﯼ ﮐﺎ ﺍﻋﻼﻥ ﮐﯿﺎ گیا ہے ﺍﻭﺭ ان میں 10 ﻓﯽ ﺻﺪ سیٹں ﻏﯿﺮ ﻣﻠﮑﯽ ﻃﺎﻟﺐ ﻋﻠﻤﻮﮞ کے لیے ﺭﮐﮭی جا ﺋﮯ گیں۔

ﺑﮭﺎﺭﺗﯽ ﻃﻠﺒﺎ کی ﺑﮍﯼ ﺗﻌﺪﺍﺩ ﺑﯿﻦ ﺍﻻﻗﻮﺍﻣﯽ ﺳﻄﺢ ﭘﺮ ﺗﺴﻠﯿﻢ ﺷﺪﮦ ﮈﮔﺮﯼ ﺍﻭﺭ ﺍﻋﻠﯽ ﺗﻌﻠﯿمی ﻣﻌﯿﺎﺭ کی ﮐﺸﺶ کی وجہ سے ﺑﯿﺮﻭﻥ ﻣﻠﮏ ﺗﻌﻠﯿم حاصل کرنے ﺟﺎتے ہیں۔

ﺑﮭﺎﺭﺗﯽ ﻃﺎﻟﺐ ﻋﻠﻤﻮﮞ کی ﻣﻮبیلٹی ﺭﭘﻮﺭﭦ 2016ء ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ، ﺑﯿﺮﻭﻥ ﻣﻠﮏ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﺣﺎﺻﻞ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻧﯽ ﻃﻠﺒﮧ ﮐﯽ ﺗﻌﺪﺍﺩ میں 2014 ﺀ ﻣﯿﮟ12 ﻓﯿﺼﺪ ﺍﺿﺎﻓﮧ ﺩﯾﮑﮭﺎ گیا ، ﺍﻭﺭ ﺍب یہ ﺷﺮﺡ 17.8 ﻓﯿﺼﺪ سے ﺑﮭﯽ ﺯﯾﺎﺩﮦ تجاوزکر چکی ہے۔یہ ﻣﺴﻠﺴﻞ ﺩﻭﺳﺮا ﺳﺎﻝ ہے کہ ﺑﮭﺎﺭﺕ کی ‏[ﻧﻤﻮ ‏] ﺷﺮﺡ ﭼﯿﻦ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﺑﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﺯﯾﺎﺩﮦ ہے۔

لیکن اب بھارت اپنے تعلیمی معیار کو مزید بہتر بنانے کی کو شش میں ہے۔ جس میں ﭨﯿﮑﻨﺎﻟﻮﺟﯽ ﯾﺎ ﺁﺋﯽﺁﺋﯽ ﭨﯽ ﮐﮯ ﺑﮭﺎﺭﺗﯽ ﺍﺩﺍﺭﻭﮞ ﮐﻮ ﺑﯿﻦ ﺍﻻﻗﻮﺍﻣﯽ بنانے ﮐا ﻣﻨﺼﻮﺑﮯ شامل ہے۔جس ﮐﮯ تحت ﻣﻠﮏ کے ﺳﺐ ﺍﺩﺍﺭے ﺑﯿﺮﻭﻥ ﻣﻠﮏ کے ﻣﺎﮨﺮﯾﻦ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﻃﺮﻑ ﻣﺘﻮﺟﮧ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﻮﺷﺸﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﺿﺎﻓﮧ ﮐﺮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔

اور اس مقصد ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﯾﮏ ﻧﺌﮯ ﭘﺮﻭﮔﺮﺍﻡ کو متعارف کروانے ﭘﺮبھی ﺍﺗﻔﺎﻕ ہے جو کہ ﺍﺿﺎﻓﯽ 10 ہزار ﻏﯿﺮ ﻣﻠﮑﯽ ﻃﻠﺒﺎﺀ کو تعلیم کے مواقعے فراہم کرے گا۔

ﺁﺋﯽ ﺁﺋﯽ ﭨﯽ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﺧﺎﺻﯽ ﺗﻌﺪﺍﺩ نے ﺑﯿﺮﻭﻥﻣﻠﮏ کی ﻓﯿﮑﻠﭩﯽ ﮐﯽ ﺧﺪﻣﺎﺕ ﺣﺎﺻﻞ کرنے کے ﮐﯿﻨﯿﮉﺍ، ﺍﻣﺮﯾﮑﮧ ﺍﻭﺭ ﺑﺮﻃﺎﻧﯿﮧ ﻣﯿﮟ ﺩﻭﺭے کیے۔ ﻣﺜﺎﻝ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ چند ﻧﺌﮯ ﺍﺩﺍﺭﻭﮞ جیسا کے ﺁﺋﯽ ﺁﺋﯽ ﭨﯽ ﺭﻭﭘﮍ،روپ نگر ﭘﻨﺠﺎﺏ نے اپنے ﻣﺌﯽ ﺍﻭﺭ ﺟﻮﻥ کے ﺗﯿﻦ ملکی ﺩﻭﺭﮮ ﮐﮯ ﺩﻭﺭﺍﻥ ﻣﻤﮑﻨﮧ ﺍﻣﯿﺪﻭﺍﺭﻭﮞ ﮐﯽ ﻧﺸﺎﻧﺪﮨﯽ ﮐﯽ۔

ﺍﺩﺍﺭﮮ ﮐﮯ ﺣﮑﺎﻡ ﻧﮯ یہ بھی ﺑﺘﺎیا کہ ان میں ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ تر ﺑﮭﺎﺭﺗﯽ ﻧﮋﺍﺩ ﻣﺎﮨﺮﯾﻦ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﺗﮭﮯ جو "اپنی ﮐﯽ ﺟﮍﻭﮞ ﭘﺮ ﻭﺍﭘﺲ " آنے ﮐﮯ ﻟﺌﮯ بے تاب تھے۔

آئی آئی ٹی دہلی کے ڈائریکٹر کے مطابق کہ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺍﺏ ﻣﺎﮨﺮﯾﻦ ﺗﻌﻠﯿﻢ اور ﺣﮑﺎﻡ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻣﻞ ﮐﺮایک ﭨﯿم بناي ہے جو ﺍﻣﺮﯾﮑﮧ ﻣﯿﮟ ﺁﺋﯿﻮﯼ ﻟﯿﮓ ﮐﺎﻟﺠﻮﮞ ﮐﺎ ﺩﻭﺭﮦ کرے گی ﺍﻭﺭ ﻭہاں کے ﺑﮩﺘﺮﯾﻦ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺍﺩﺍﺭﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﭘﮍﮬﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺗﺮﻏﯿﺒﺎﺕ ﭘﯿﺶ ﮐﺮﮮ گی۔

ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ مزید ﮐﮩﺎ کہ ﻏﯿﺮﻣﻠﮑﯽ ﺷﮩﺮﯾﻮﮞ ﮐﻮ ﺁﺋﯽ ﺁﺋﯽ ﭨﯽ ﻣﯿﮟ ﺑﺎﻗﺎﻋﺪﮦ ﺗﺪﺭﯾﺲ ﻣﻼﺯﻣت ﻟﯿﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﻓﻌﺎﻝ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺑﮭﺎﺭﺕ ﮐﯽ ﻭﺯﺍﺭﺕ ﺧﺎﺭﺟﮧ ﻭﯾﺰﺍ ﻗﻮﺍﻧﯿﻦ ﮐﻮ ﺁﺳﺎن بناۓ۔ کیونکہ ﻣﻮﺟﻮﺩﮦ ﻗﻮﺍﻧﯿﻦ ﮐﮯ ﺗﺤﺖ یہ ﺁﺳﺎﻧﯽ ﺳﮯ ﻣﻤﮑﻦ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ۔

ﺁﺋﯽ ﺁﺋﯽ ﭨﯽ ﮐﮯ ﺫﺭﺍﺋﻊ کا ﮐﮩﻨﺎ ﮨﮯ ﻣﻮﺟﻮﺩﮦ ﻧﻈﺎﻡ کے تحت ﻓﯿﮑﻠﭩﯽ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﻭﯾﺰﺍ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﻣﯿﮟﺩﻭﻧﻮﮞ ﺍﻣﻮﺭ ﺧﺎﺭﺟﮧ ﺍﻭﺭ ﺩﺍﺧﻠﮧ ﮐﯽ ﻭﺯﺍﺭﺗﻮﮞ ﺳﮯ ﻣﻨﻈﻮﺭﯼ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ جس میں چھ ﻣﺎﮦ ﺍﯾﮏ ﺳﺎﻝ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ کا عرصہ لگتا ہے۔ جسکی وجہ سےﻏﯿﺮﻣﻠﮑﯽ ﺍﻣﯿﺪﻭﺍﺭاپنی ملازمت ﮐﯽ ﭘﯿﺸﮑﺶ واپس لے لیتے ہیں۔ اس کے علاوہ ﺩﯾﮕﺮ ﺭﮐﺎﻭﭨﻮﮞ میں ﻣﻐﺮﺑﯽ ﻣﻤﺎﻟﮏ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﺑﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﻢ ﺗﻨﺨﻮﺍہ ﺍﻭﺭ ﺑﮩﺖ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﻣﺎﺣﻮﻝ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﻨا اور ﮐﺎﻡ کرنا ﺷﺎﻣﻞ ﮨﯿﮟ۔

ﻏﯿﺮ ﻣﻠﮑﯽ ﻣﺎﮨﺮﯾﻦ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﮐﻮ ﻣﺘﻮﺟﮧ ﮐﺮﻧﮯ لیے2017ء ﺳﮯ ﻏﯿﺮ ﻣﻠﮑﯽ ﻃﻠﺒﺎﺀ کے لیے ﻟﺌﮯ ﺍﯾﮏ ﻧﺌﮯ ﭘﺮﻭﮔﺮﺍﻡ کی ﻣﻨﺼﻮﺑﮧ ﺑﻨﺪﯼ کی گی ہے۔23 ﺁﺋﯽ ﺁﺋﯽ ﭨﯽ یونیوسٹیاں ﻣﺠﻤﻮﻋﯽ ﻃﻮﺭپر، اپنے ﻣﻌﻤﻮﻝ کے ﻣﻠﮑﯽ ﻃﻠﺒﺎﺀ ﮐﮯ ﺍﻧداراج کے ﻋﻼﻭﮦ 10 ہزار ﻏﯿﺮ ﻣﻠﮑﯽ ﻃﺎﻟﺐ ﻋﻠﻤﻮﮞ کے ﺍﻧﺪﺭﺍﺝ ﮐﯽ ﺍﻣﯿﺪ ﮐﺮ ﺭﮨی ﮨﯿﮟ۔

ﺁﺋﯽ ﺁﺋﯽﭨﯽ کے ﻃلبا ﮐﯽ ﮐﻞ تعداد 72000 ہے اور2020 تک ﺳﮯ ﺗﻌﺪﺍﺩ ﻣﯿﮟ ﺍﺿﺎﻓﮧ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﻣﻨﺼﻮﺑﮧ ﺑﻨﺪﯼ ﮐﺎ ﺍﻋﻼﻥ ﮐﯿﺎ گیا ہے ﺍﻭﺭ ان میں10 ﻓﯽ ﺻﺪ سیٹں ﻏﯿﺮ ﻣﻠﮑﯽ ﻃﺎﻟﺐ ﻋﻠﻤﻮﮞ کے لیے ﺭﮐﮭی جا ﺋﮯ گیں ۔

ﺍﻧﺴﺎﻧﯽ ﻭﺳﺎﺋﻞ ﮐﯽ ﺗﺮﻗﯽ ﮐﯽ ﻭﺯﺍﺭﺕ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﯾﺎﺩﺩﺍﺷﺖ ﭘﺮ جو ﺟﻨﻮﺭﯼ ﻣﯿﮟ ﺁﺋﯽ
ﺁﺋﯽ ﭨﯽ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ بھیجئی گئی اس میں واضح طور پر کہا گیا کہ ﺑﮭﺎﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﻏﯿﺮ ﻣﻠﮑﯽ ﻃﻠﺒﮧ کوﺩﺍﺧلے ﻓﺮﺍﮨﻢ ﮐﺮنے میں ﻣﻠﮑﯽ ﻃﺎﻟﺐ ﻋﻠﻤﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺩﺳﺘﯿﺎﺏ ﻧﺸﺴﺘﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﮐﻤﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﮔﯽ۔


تبصرہ کیجیے

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.